Nikkah   
Send this Article to Your Friend

وال

 Aslam o alaikum,

Mera naam sanya hai, meri shadi meray walid ne apni merzi se meray taya zaad cousin se krwa di thi.na wo raazi thay is shadi kay liye na mein. Abu jaan ne sirf ye dekha kay apna hai.
Akhir saal baad talaq ho gai. Ab bi meray abu apni braadri mein hi rishta krwana chahtay hein mera.
Meray liye aik aur braadri se rishta aya hay jo mujay bi pasend hai lekin meray abu nehi maan rehay. 
Jin ka rishta aya hai unhay hum 8 saal se family ko janti hoon.meray walid sahib ka kehna hai kay larka aur family dono theek hein lekin braadri apni nehi hay.sirf is weja se na kr rehay hein.
Mein jeld ez jeld nikah krna chahti hoon. Unka naam azhar hai wo bi razi hein aur unki family bi.

Nikah jeldi krna chahti hoon 
Takay mein koi gunah na kr bethu.mager nikah ke liye wali ki zarurt hai..bapa jee plzz meri maded kijyee mujay is baat ne boht preshaan kr rekha hai.maa razi hein lekin abu nehi.mein kya kroon.mujay koi raasta bataien mein kis se rejuu kru.mujay ap kay jawab ka intzaar rehay ga.
.shukriya.

جواب

بسم اللہ الرحمن الرحیم

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ و برکاتہ

اگر کوئی اپنی برادری کا نہیں بھی ہے تو ان سے نکاح کرنے میں حرج کی کوئی بات نہیں بشرطیکہ وہ بدمذہب نہ ہو ۔

بلا وجہ اپنی ذات و برادری کے لئے لڑکیوں کے نکاح میں تاخیر کرنا مناسب نہیں والدین کو اس بارے میں سنجیدگی سے کام لینا چاہئے ۔

اگر غیر برادری والا سنی صحیح العقیدہ ہو اور کوئی شرعی رکاوٹ بھی نہ ہو تو نکاح رشتہ آنے پر نکاح کردینا چاہئے ۔

دین اسلام نے نکاح کے حوالے سے اپنی برادری میں ہی نکاح کرنے کا پابند نہیں کیا اس لئے بلاوجہ اس برادری کی قید لگائے رکھنا درست نہیں ۔ 

واللہ ورسولہ اعلم ، عزوجل وصلی اللہ تعالی علیہ وسلم